Skip to main content

1.6 Revelation || Daily Hadith Online

Hadith from Sahih Bukhari :-

`Abdullah bin `Abbas Narrated : Abu Sufyan bin Harb informed me that Heraclius had sent a messenger to him while he had been accompanying a caravan from Quraish. They were merchants doing business in Sham (Syria, Palestine, Lebanon and Jordan), at the time when Allah's Apostle had truce with Abu Sufyan and Quraish infidels. So Abu Sufyan and his companions went to Heraclius at Ilya (Jerusalem). Heraclius called them in the court and he had all the senior Roman dignitaries around him. He called for his translator who, translating Heraclius' question said to them, "Who amongst you is closely related to that man who claims to be a Prophet?" Abu Sufyan replied, "I am the nearest relative to him (amongst the group).

 Heraclius said, "Bring him (Abu Sufyan) close to me and make his companions stand behind him." Abu Sufyan added, Heraclius told his translator to tell my companions that he wanted to put some questions to me regarding that man (The Prophet) and that if I told a lie they (my companions) should  contradict me." Abu Sufyan added, "By Allah! Had I not been afraid of my companions labeling me a liar, I would not have spoken the truth about the Prophet. The first question he asked me about him was: 'What is his family status amongst you?' I replied, 'He belongs to a good (noble) family amongst us.' Heraclius further asked, 'Has anybody amongst you ever claimed the same (i.e. to be a Prophet) before him?'

I replied, 'No.' He said, 'Was anybody amongst his ancestors a king?' I replied, 'No.' Heraclius asked, 'Do the nobles or the poor follow him?' I replied, 'It is the poor who follow him.' He said, 'Are his followers increasing decreasing (day by day)?' I replied, 'They are increasing.' He then asked, 'Does anybody amongst those who embrace his religion become displeased and renounce the religion afterwards?' I replied, 'No. 'Heraclius said, 'Have you ever accused him of telling lies before his claim (to be a Prophet)?'

I replied, 'No. ' Heraclius said, 'Does he break his promises?' I replied, 'No.We are at truce with him but we do not know what he will do in it.' I could not find opportunity to say anything against him except that. Heraclius asked, 'Have you ever had a war with him?' I replied, 'Yes.' Then he said, 'What was the outcome of the battles?' I replied, 'Sometimes he was victorious and sometimes we.' Heraclius said, 'What does he order you to do?' I said, 'He tells us to worship Allah and Allah alone and not to worship anything along with Him, and to renounce all that our ancestors had said. He orders us to pray, to speak the truth, to be chaste and to keep good relations with our Kith and kin.' Heraclius asked the translator to convey to me the following, I asked you about his family and your reply was that he belonged to a very noble family.

In fact all the Apostles come from noble families amongst their respective peoples. I questioned you whether anybody else amongst you claimed such a thing, your reply was in the negative. If the answer had been in the affirmative, I would have thought that this man was following the previous man's statement.

Then I asked you whether anyone of his ancestors was a king. Your reply was in the negative, and if it had been in the affirmative, I would have thought that this man wanted to take back his ancestral kingdom. I further asked whether he was ever accused of telling lies before he said what he said, and your reply was in the negative. So I wondered how a person who does not tell a lie about others could ever tell a lie about Allah. I, then asked you whether the rich people followed him or the poor. You replied that it was the poor who followed him. And in fact all the Apostle have been followed by this very class of people. Then I asked you whether his followers were increasing or decreasing. You replied that they were increasing, and in fact this is the way of true faith, till it is complete in all respects.

 I further asked you whether there was anybody, who, after embracing his religion, became displeased  and discarded his religion. Your reply was in the negative, and in fact this is (the sign of) true faith, when its delight enters the hearts and mixes with them completely. I asked you whether he had ever betrayed. You replied in the negative and likewise the Apostles never betray. Then I asked you what he ordered you to do. You replied that he ordered you to worship Allah and Allah alone and not to worship any thing along with Him and forbade you to worship idols and ordered you to pray, to speak  the truth and to be chaste.

 If what you have said is true, he will very soon occupy this place underneath my feet and I knew it (from the scriptures) that he was going to appear but I did not know that he would be from
you, and if I could reach him definitely, I would go immediately to meet him and if I were with him, I would certainly wash his feet.' Heraclius then asked for the letter addressed by Allah's Apostle which was delivered by Dihya to the Governor of Busra, who forwarded it to Heraclius to read. The contents of the letter were as follows: "In the name of Allah the Beneficent, the Merciful (This letter is) from Muhammad the slave of Allah and His Apostle to Heraclius the ruler of Byzantine. Peace be upon him, who follows the right path. Furthermore I invite you to Islam, and if you become a Muslim you will be safe, and Allah will double your reward, and if you reject this invitation of Islam you will be committing a sin by misguiding your Arisiyin (peasants). (And I recite to you Allah's Statement:)

'O people of the scripture! Come to a word common to you and us that we worship none but Allah and that we associate nothing in worship with Him, and that none of us shall take others as Lords beside Allah. Then, if they turn away, say: Bear witness that we are Muslims (those who have surrendered to Allah).' (3:64). Abu Sufyan then added, "When Heraclius had finished his speech and
had read the letter, there was a great hue and cry in the Royal Court. So we were turned out of the court. I told my companions that the question of Ibn−Abi−Kabsha (the Prophet  Muhammad) has become so prominent that even the King of Bani Al−Asfar (Byzantine) is afraid of him. Then I started to become sure that he (the Prophet) would be the conqueror in the near future till I embraced Islam (i.e. Allah guided me to it). The sub narrator adds, "Ibn An−Natur was the Governor of
Ilya' (Jerusalem) and Heraclius was the head of the Christians of Sham. Ibn An−Natur narrates that once while Heraclius was visiting Ilya' (Jerusalem), he got up in the morning with a sad mood. Some of his priests asked him why he was in that mood? Heraclius was a foreteller and an astrologer. He
replied, 'At night when I looked at the stars, I saw that the leader of those who practice circumcision had appeared (become the conqueror). Who are they who practice circumcision?' The people replied, 'Except the Jews nobody practices circumcision, so you should not be afraid of them (Jews).


'Just Issue orders to kill every Jew present in the country.' While they were discussing it, a messenger sent by the king of Ghassan to convey the news of Allah's Apostle to Heraclius was brought in. Having heard the news, he (Heraclius) ordered the people to go and see whether the messenger of Ghassan was circumcised. The people, after seeing him, told Heraclius that he was circumcised. Heraclius then asked him about the Arabs. The messenger replied, 'Arabs also practice circumcision.'
(After hearing that) Heraclius remarked that sovereignty of the Arabs had appeared. Heraclius then wrote a letter to his friend in Rome who was as good as Heraclius in knowledge. Heraclius then left for Homs. (a town in Syrian and stayed there till he received the reply of his letter from his friend
who agreed with him in his opinion about the emergence of the Prophet and the fact that he was a Prophet.

On that Heraclius invited all the heads of the Byzantines to assemble in his palace at Homs. When they assembled, he ordered that all the doors of his palace be closed. Then he came out and said, 'O Byzantines! If success is your desire and if you seek right guidance and want your empire to remain then give a pledge of allegiance to this Prophet (i.e. embrace Islam).' (On hearing the views of Heraclius) the people ran towards the gates of the palace like onagers [??] but found the doors closed.

Heraclius realized their hatred towards Islam and when he lost the hope of their embracing Islam, he ordered that they should be brought back in audience. (When they returned) he said, 'What already said was just to test the strength of your conviction and I have seen it.' The people prostrated before
him and became pleased with him, and this was the end of Heraclius' story (in connection with his faith).


Translation


'عبد اللہ بن `عباس نے بیان کیا: ابو صوفی بن بن حرب نے مجھے بتایا کہ Heraclius ایک رسول بھیجا جب وہ قریش سے قافلے کے ساتھ تھے. وہ سودا تھے جو شام (شام، فلسطین، لبنان اور اردن) میں کاروبار کر رہے تھے، اس وقت جب رسول اللہ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم نے ابوبکر اور قریش کافروں کے ساتھ ظلم کیا تھا. لہذا ابو صوفیان اور اس کے ساتھیوں نے الیا (یروشلیم) میں ہیرولیس کے پاس گئے. Heraclius ان کو عدالت میں بلایا اور اس کے ارد گرد اس کے تمام سینئر رومان سلطنت تھے. اس نے اپنے مترجم کے نام سے کہا، "ہریکلیس کے ترجمہ کا ترجمہ ان سے کہا،" آپ میں سے کون کون سا نبی ہے جو نبی بننے کا دعوی کرتا ہے؟ " ابوبکر نے جواب دیا، "میں اس کے قریبی رشتہ دار ہوں (اس گروپ کے درمیان).

Heraclius نے کہا، "اسے (ابو صوفین) لاو میرے قریب ہے اور ان کے ساتھیوں کے پیچھے اس کے پیچھے کھڑے ہیں." ابو صوفیان نے مزید کہا، ہریکلی نے اپنے مترجم کو بتایا کہ میرے ساتھیوں کو بتانا کہ میں اس شخص (نبی صلی اللہ علیہ وسلم) کے بارے میں کچھ سوال کرنا چاہتا ہوں اور اگر میں جھوٹ بولوں کہ وہ (میرے ساتھیوں) کو مجھ سے متفق ہونا چاہئے. "ابو صوفی نے مزید کہا،" اللہ کی قسم! اگر میں اپنے ساتھیوں سے ڈرتا ہوں تو مجھے جھوٹا نہیں لگایا جائے گا، میں نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے بارے میں سچ بات نہیں کروں گا. پہلا سوال انہوں نے مجھ سے ان کے بارے میں پوچھا تھا: 'آپ کے درمیان ان کی خاندانی حیثیت کیا ہے؟' میں نے جواب دیا، 'وہ ہمارے درمیان ایک اچھا (عظیم) خاندان ہے.' ہریکلی نے مزید کہا، 'کیا تم میں سے کسی نے اس سے پہلے (نبی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کا دعوی کیا ہے؟'

میں نے جواب دیا، نہیں. انہوں نے کہا، 'کیا اپنے باپ دادا کے درمیان کوئی بادشاہ تھا؟' میں نے جواب دیا، نہیں. Heraclius سے پوچھا، 'کیا عظیموں یا غریبوں کو اس کی پیروی کرو؟' میں نے جواب دیا، 'یہ غریب ہے جو اس کی پیروی کرتے ہیں.' انہوں نے کہا، 'کیا اس کے پیروکاروں کو دن میں دن میں کمی کی جا رہی ہے؟' میں نے جواب دیا، 'وہ بڑھ رہے ہیں.' پھر اس سے پوچھا، کیا کیا ان میں سے کوئی بھی اپنے مذہب کو ناپسند کرتا ہے اور اس کے بعد مذہب کو چھوڑ دیتا ہے؟ میں نے جواب دیا، نہیں. 'ہریکلی نے کہا،' کیا تم نے کبھی اس پر الزام لگایا ہے کہ اس کے دعوی سے پہلے (نبی بننا)؟

میں نے جواب دیا، نہیں. 'ہریکلی نے کہا،' کیا وہ اپنا وعدہ توڑتا ہے؟ ' میں نے جواب دیا، نہیں. ہم اس کے ساتھ برے ہیں لیکن ہم نہیں جانتے کہ وہ اس میں کیا کریں گے. ' میں اس کے سوا کچھ بھی نہیں کہنا چاہتا تھا. Heraclius پوچھا، 'کیا آپ نے کبھی اس کے ساتھ جنگ ​​کی ہے؟' میں نے جواب دیا، 'ہاں.' پھر انہوں نے کہا، 'لڑائیوں کا کیا نتیجہ تھا؟' میں نے جواب دیا، 'کبھی کبھی وہ کامیاب اور کبھی کبھی ہم.' Heraclius نے کہا، 'وہ آپ کو کیا حکم دیتا ہے؟' میں نے کہا، 'وہ ہمیں اکیلے اللہ کی عبادت اور اکیلے اللہ کی عبادت کرنے کے لئے اور اس کے ساتھ کچھ بھی عبادت کرنے کے لئے نہیں، اور ہمارے باپ دادا نے کہا تھا کہ سب کو چھوڑنے کے لئے. انہوں نے ہمیں حکم دیا ہے کہ سچے بات کرنے کے لئے، پاکیزگی اور ہمارے کیت اور کن کے ساتھ اچھے تعلقات رکھنے کے لئے. ہریکلی نے مترجم سے کہا کہ مجھے مندرجہ ذیل الفاظ میں بیان کیا جاۓ، میں نے آپ کے خاندان کے بارے میں پوچھا تھا اور آپ کا جواب یہ تھا کہ وہ بہت ہی زبردست خاندان تھا.

حقیقت یہ ہے کہ تمام پیغمبر اپنے متعلقہ لوگوں کے درمیان اچھے لوگوں سے آتے ہیں. میں آپ سے پوچھتا تھا کہ آپ کے درمیان کسی اور نے دعوی کیا کہ آپ کا جواب منفی تھا. اگر جواب مثبت میں رہا تو، مجھے لگتا تھا کہ یہ آدمی پچھلے آدمی کے بیان کی پیروی کر رہا تھا.

پھر میں نے تم سے پوچھا کہ کیا ان کے باپ دادا کے بادشاہ تھے. آپ کا جواب منفی تھا، اور اگر یہ مثبت طور پر تھا تو مجھے لگتا تھا کہ یہ آدمی اپنے آبائی سلطنت کو واپس لے جانا چاہتا تھا. میں نے مزید پوچھا کہ کیا وہ کبھی جھوٹ بولنے پر الزام لگایا گیا تھا اس سے پہلے کہ اس نے کیا کہا، اور آپ کا جواب منفی تھا. لہذا میں نے حیران کیا کہ کوئی شخص جو دوسروں کے بارے میں جھوٹ نہیں بتاتا وہ اللہ کے بارے میں جھوٹ بول سکتا ہے. میں نے آپ سے پوچھا کہ امیر لوگ اس کے پیچھے یا غریب تھے. آپ نے جواب دیا کہ یہ غریب تھا جو اس کے پیچھے تھے. اور حقیقت میں تمام رسول اس لوگوں کے بہت ہی طبقے کی پیروی کرتے ہیں. پھر میں نے تم سے پوچھا کہ ان کے پیروکاروں کو بڑھتی ہوئی یا کمی کی گئی تھی. آپ نے جواب دیا کہ وہ بڑھ رہے ہیں، اور حقیقت میں یہ صحیح عقیدے کا راستہ ہے، جب تک کہ یہ مکمل طور پر مکمل نہ ہو.

میں نے آپ سے مزید پوچھا کہ آیا کوئی بھی ایسا نہیں تھا، جو اپنے مذہب کو قبول کرنے کے بعد، ناخوش ہو گیا اور اپنے مذہب کو رد کر دیا. آپ کا جواب منفی تھا، اور اصل میں یہ سچ (ایمان کا نشانہ) ہے، جب اس کی خوشی دل میں داخل ہوتی ہے اور ان کے ساتھ مکمل طور پر ملتی ہے. میں آپ سے پوچھا آیا کہ اس نے کبھی دھوکہ دیا ہے. آپ نے منفی طور پر جواب دیا اور اسی طرح رسولوں کو کبھی دھوکہ نہیں دی. پھر میں نے تم سے پوچھا کہ اس نے آپ کو کیا حکم دیا تھا. آپ نے جواب دیا کہ اس نے آپ کو حکم دیا کہ اللہ کی عبادت کرو اور صرف االله کی عبادت کرو اور اس کے ساتھ کسی چیز کی عبادت نہ کرنا اور بتوں کی عبادت کرنے سے انکار کرو اور آپ کو نماز ادا کرنے کے لئے، سچ بولنے کے لئے اور پاک ہونا.

اگر آپ نے کہا ہے کہ سچ ہے تو، وہ جلد ہی اپنے پاؤں کے نیچے اس جگہ پر قبضہ کرے گا اور میں اسے (اساتذہ سے) جانتا ہوں کہ وہ ظاہر کرنے کے لئے جا رہا تھا لیکن میں نہیں جانتا کہ وہ

آپ، اور اگر میں اسے ضرور پہنچ سکتا تو، میں اس سے ملنے کے لئے فوری طور پر جاؤں گا اور اگر میں ان کے ساتھ ہوں تو میں ضرور اپنے پاؤں دھونا چاہتا ہوں. اس کے بعد، ہریکلی نے اللہ کے رسول سے خطاب کرتے ہوئے اس خط سے پوچھا جو دیہیا نے بصرہ کو گورنر کو پہنچایا، جس نے اسے ہریکلیس کو پڑھنے کے لئے آگے بڑھایا. خط کے مندرجات مندرجہ ذیل تھے: "اللہ کے نام پر رحم کرنے والا مہربان (یہ خط ہے) محمد کے غلام اور اس کے رسول سے بیزانین کے حکمران Heraclius کرنے کے لئے. اس پر امن، جو دائیں مندرجہ ذیل راستہ اور اس کے علاوہ میں آپ کو اسلام میں دعوت دیتا ہوں اور اگر آپ مسلمان بنیں تو آپ محفوظ رہیں گے اور اللہ آپ کے اجر کو دوگنا کرے گا اور اگر آپ اس دعوت کو مسترد کرتے ہیں تو آپ اپنے اریسین (کسانوں) کو گمراہ کر کے گناہ کرینگے. اور میں آپ کو اللہ کا بیان دیتا ہوں

اے اہل کتاب! آپ کے ساتھ ایک عام لفظ پر آو اور ہمارا یہ کہ ہم خدا کے سوا کسی کی عبادت نہیں کریں گے اور ہم اس کے ساتھ عبادت میں کچھ بھی نہیں شریک ہوں گے اور ہم میں سے کسی کو اللہ کے سوا نوروں کے طور پر نہیں لیا جائے گا. پھر، اگر وہ دور ہوجائیں تو کہتے ہیں: گواہ رہو کہ ہم مسلمان ہیں (جو لوگ اللہ کے فرمانبردار ہیں). (3:64). ابو صوفین نے مزید کہا، "جب ہریکلی نے اپنی تقریر ختم کردی تھی

خط پڑھا تھا، شاہی کورٹ میں ایک بہت اچھا اور رونا تھا. لہذا ہم عدالت سے باہر نکل گئے. میں نے اپنے ساتھیوں سے کہا کہ ابن ابی کبشا (نبی صلی اللہ علیہ وسلم) کا سوال اتنا بڑا بن گیا ہے کہ یہاں تک کہ ابن الاسفر کا بادشاہ بھی بھی اس سے ڈرتا ہے. پھر میں نے اس بات کو یقینی بنانا شروع کیا کہ وہ قریب آنے والے مستقبل میں فاتح ہوں گے جب تک میں نے اسلام قبول کرلیا (یعنی اللہ نے مجھے اس ہدایت کی). ذیلی حدیث میں اضافہ ہوا ہے، "ابن اینتھر کا گورنر تھا

الیا ((یروشلیم) اور ہریکلیس شمع عیسائیوں کے سربراہ تھے. ابن این Natur بیان کرتا ہے کہ ایک بار جب Heraclius lya ((یروشلیم) کا دورہ کر رہا تھا، وہ صبح کے غم میں موڈ کے ساتھ اٹھ گیا. اس کے بعض پادریوں سے پوچھا کہ وہ اس موڈ میں کیوں تھے؟ Heraclius ایک foreteller اور ایک ستراجیہ تھا. وہ

جواب دیا، 'رات کو جب میں ستاروں کو دیکھتا ہوں، میں نے دیکھا کہ ختنہ کرنے والوں کے رہنما (فاتح بننے والے) کا مظاہرہ کیا تھا. وہ کون ہیں جو فتنہ کرتے ہیں؟ لوگوں نے جواب دیا، 'یہودیوں کے سوا کوئی بھی ختنہ نہیں کرتا، لہذا آپ کو ان (یھودیوں) سے خوف نہ ہونا چاہئے.

ملک میں موجود ہر یہودی کو مارنے کے لئے 'صرف حکم کے حکم'. جب وہ اس پر بحث کررہے ہیں تو غسان کے بادشاہ نے بھیجا ایک رسول رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی خبروں کو ہریکلیس میں لے کر لایا گیا. خبروں کو سننے کے بعد انہوں نے لوگوں کو حکم دیا کہ دیکھیں کہ غسان کا رسول . لوگوں نے، اس کو دیکھنے کے بعد، Heraclius کو بتایا کہ وہ ختنہ کیا گیا تھا. Heraclius پھر اس سے عرب کے بارے میں پوچھا. رسول صلی اللہ علیہ وسلم نے جواب دیا، 'عرب بھی ختنہ کرتے ہیں.'

(اس کی سماعت کے بعد) Heraclius نے کہا کہ عربوں کی حاکمیت ظاہر ہوئی تھی. Heraclius پھر روم میں اپنے دوست کے لئے ایک خط لکھا جو علم میں Heraclius کے طور پر اچھا تھا. اس کے بعد ہیسلیس نے حمص کو چھوڑ دیا. (شام میں ایک شہر اور وہاں ٹھہرایا جب تک کہ اس نے اپنے دوست سے اپنے خط کا جواب ملا

جو اس کے ساتھ نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے ظہور کے بارے میں اپنے خیال میں اتفاق کیا اور حقیقت یہ ہے کہ وہ نبی تھا.

اس کے ہریکلیس نے حماس میں اپنے محل میں جمع کرنے کے لئے سبزیوں کے سربراہان کو مدعو کیا. جب انہوں نے جمع کیا تو، اس نے حکم دیا کہ اس کے محل کے دروازے بند ہو جائیں. پھر وہ باہر آیا اور کہا، اے بیزانسین! اگر کامیابی آپ کی خواہش ہے اور اگر آپ صحیح راہنمائی طلب کرتے ہیں اور چاہتے ہیں کہ آپ کا سلطنت باقی رہیں تو اس نبی صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کی اطاعت کی عہد عطا فرما. (Heraclius کے خیالات کو سننے کے) لوگوں کو محل کے دروازوں کی طرح چلانے والوں کی طرح بھاگ گیا [؟؟] لیکن دروازے کو بند کر دیا.

Heraclius اسلام کی طرف ان کے نفرت کا احساس ہوا اور جب انہوں نے ان کے منسلک اسلام کی امید کھو دی، تو انہوں نے حکم دیا کہ انہیں سامعین میں واپس لینا چاہئے. (جب وہ واپس آئے) انہوں نے کہا، 'پہلے ہی کہا گیا تھا کہ آپ کی سزا کی طاقت کی جانچ پڑتال کی جائے اور میں نے اسے دیکھا ہے.' لوگوں نے سجدہ کیا

اس کے ساتھ اور اس سے خوش ہو گیا، اور یہ Heraclius کی کہانی کا خاتمہ (اس کے ایمان کے سلسلے میں) تھا.


Narration :- 
The above passage is of easy English and therefore no need of narration one can easily understand this.

Comments

Popular posts from this blog

1.2 Revelation || Daily Hadith Online

Hadith from Sahih Bukhari:

Aisha (the mother of faithful believers) narrated : Al-Harith bin Hashim asked Allah's Apostle! How is the divine inspiration revealed to you?" Allah's Apostle replied , "Sometimes it is revealed like the ringing of the bell, this form of inspiration is hardest of all and then this state passes off after I grasped what is inspired. Sometimes the Angel comes in the form of a man and talks to me and I grasp what he says." Aisha (the mother of faithful believers) added: Verily I saw the Prophet being inspired Divinely on a very cold day and noticed the sweat dropping from his forehead ( as the inspiration was over).


عائشہ (وفاداری مومنوں کی والدہ) نے بیان کیا: حدیث بن حشیم نے اللہ کے رسول سے پوچھا! خدا کے رسول نے جواب دیا، "اللہ کے رسول نے جواب دیا،" کبھی کبھی گھنٹی کی انگوٹی کی طرح نازل ہوتا ہے، اس طرح کی حوصلہ افزائی سب سے زیادہ مشکل ہے اور اس کے بعد میں نے حوصلہ افزائی کی ہے کہ یہ ریاست ختم ہوجاتا ہے. کبھی کبھی فرشتہ ایک آدمی …

1.3 Revelation || Daily Hadith Online

Hadith from Sahih Bukhari:

Aisha (the mother of faithful believers) narrated : The commencement of the Divine Inspiration to Allah's Apostle was in the form of good dreams which come true like bright day light, and then the love of seclusion was bestowed upon him. He used to go in seclusion in the cave of Hira where he used to worship ( Allah alone) continuously for many days before his desire to see his family. He used to take with him the journey food for the stay and then come back to (his wife) Khadija to take his food likewise again till suddenly the truth descended upon him while he was in the cave of Hira. The angels came near him and asked him to read . The Prophet replied, "I don't know how to read. The Prophet added, " The angel me (forcefully) and pressed me so hard that I could not bear it any more. He then released me and again asked me to read and I replied, 'I do not know how to read.' Thereupon he caught me again and then pressed me a second …

1.20 Belief || Daily Hadith Online

Hadith from Sahih Bukhari

Narrated Anas: The Prophet said, "Whoever possesses the following three qualities will taste the sweetness of faith:

1. The one to whom Allah and his Apostle become dearer than anything else.
2. Who loves a person and he loves him only for Allah's sake.
3. Who hates to revert to disbelief (Atheism) after Allah has brought (saved) him out from it, as he hates to be thrown in fire."

Translation

نبی صلی اللہ علیہ وآله وسلم نے فرمایا: "جو بھی تین مندرجہ ذیل ہیں وہ ایمان کی خوشحالی کا مزہ چکھائیں گے:
1. جس کو اللہ اور اس کے رسول کسی اور سے زیادہ پیار کرتے ہو.
2. جو شخص کسی سے محبت رکھتا ہے وہ صرف اللہ کے لئے صرف اس سے محبت کرتا ہے.

3. جو شخص اللہ تعالی نے اسے اس سے باہر نکال دیا ہے اس کے بعد کفر (عاجز) کو واپس لینے سے نفرت کرتا ہے، کیونکہ وہ آگ میں پھینکنے سے نفرت کرتا ہے.
Narration


Narrated Anas narrated  Prophet SAW said whoever possesses the following three qualities will taste the sweetness of faith:
1. The one to whom Allah and his prophet become …